February 25, 2021

Shah Shams Tabriz – Quds Bai to Qudsia Faqir

Shah Shams Tabriz

Quds Bai to Qudsia Faqir

Quds Bai was a very beautiful prostitute from the city of Multan. Everyone, be it the king or the minister, was thirsty for a glimpse of Quds Bai. Luxurious people used to go to her door with the intention of luxury but Quds Bai was in love with Hazrat Shah Shams Tabriz. She sees Hazrat Shah Shams Tabrizi passing through the street from the roof of her house.

One day Hazrat Shah Shams Tabriz was passing through the street in a state of high fever. Quds Bai came to the threshold and asked you to visit my poor house. The fate of this woman awoke, Shah Shams accepted Tabriz and came inside. As soon as Shah Shams Tabriz’s footsteps fell on the blessed threshold, this woman’s conscience awoke in such a way that she did not get up from prayer all her life and spent her whole life in poverty. She kept cold bandages on Mubarak’s forehead day and night for so much service to Hazrat. On the seventh day, when Hazrat Shah Shams Tabriz’s health improved, he left. Your kindness changed the title of this woman. That woman became Qudsia Faqir from Quds Bai and her dress turned white. Those who used to come to him with the intention of luxury, now they are the ones who used to kiss the threshold of the house of the revered saint.

قدس بائی سے قدسیہ فقیر

قدس بائی شہر ملتان کی ایک بہت ہی حسین و جمیل طوائف تھی۔ ہر کوئی بادشاہ ہو یا وزیر قدس بائی کی ایک جھلک کو ترستے تھے۔ عیاش لوگ عیاشی کی نیت سے اس کے در پہ جاتے لیکن قدس بائی حضرت شاہ شمس تبریزکی عاشق تھی۔ حضرت شاہ شمس تبریز کو گلی میں سے گزرتے ہوئے اپنے گھر کی چھت سے دیکھا کرتی تھی۔ ایک دن حضرت شاہ شمس تبریز سخت بخار کی حالت میں گلی میں سے گزر رہے تھے۔ قدس بائی نے چوکھٹ پہ آ کے عرض کی کہ آپ میرے غریب خانے پر تشریف لے آئیں۔ اس عورت کی قسمت جاگی ، شاہ شمس تبریز مان گئے اور اندر تشریف لے آئے۔ شاہ شمس تبریز کے قدم مبارک چوکھٹ پر پڑتے ہی اس عورت کا ضمیر ایسا جاگا کہ ساری زندگی جائےنماز سے نہیں اٹھی اور ساری زندگی فقیری میں ہی گزار دی۔ اس نے حضرت کی اتنی خدمت کی رات دن  لگاتار ماتھے مبارک پر ٹھنڈی پٹیاں رکھتی رہی۔ ساتویں دن جب حضرت شاہ شمس تبریز کی طبیعت کچھ بہتر ہوئی تو آپ وہاں سے چلے گئے۔ آپ کی نظر کرم سے اس عورت کا لقب ہی بدل گیا۔ وہ عورت قدس بائی سے قدسیہ فقیر ہو گئی اور اس کا لباس سفید ہو گیا۔ جو لوگ پہلے عیاشی کی نیت سے اس کے پاس آتے تھے اب وہی لوگ تعظیما قدسیہ فقیر کے گھر کی چوکھٹ کو چومتے تھے

ISLAM IS PEACE & SECURITY